اقوام متحدہ نے فلسطین میں اسرائیلی بستیاں جنگی جرم قرار دے دیں۔

اقوام متحدہ نے فلسطین میں اسرائیلی بستیاں جنگی جرم قرار دے دیں۔ اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کے ایک تفتیش کار نے کہا ہے کہ مغربی کنارے کے مقبوضہ فلسطینی علاقے میں اسرائیلی آباد کاری اور یہودی بستیوں کا قیام جنگی جرائم کے زمرے میں آتا ہے، جن کے لیے اسرائیل کو جواب دہ بنایا جانا چاہیے۔

سوئٹزرلینڈ میں جنیوا سے جمعہ نو جولائی کو ملنے والی رپورٹوں کے مطابق یہ بات اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کے تفتیش کار مائیکل لنک نے عالمی ادارے کی انسانی حقوق کی کونسل کے ایک اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔ مائیکل لنک مقبوضہ فلسطینی علاقوںکے لیے اقوام متحدہ کے انسانی حقوق سے متعلق خصوصی رابطہ کار بھی ہیں۔

مائیکل لنک نے یہ بات عالمی ادارے کی ہیومن رائٹس کونسل کے جس اجلاس میں کہی، اسرائیل نے اس کا یہ کہتے ہوئے بائیکاٹ کیا کہ وہ نہ تو مائیکل لنک کو دیے گئے تفتیشی اختیارات کو تسلیم کرتا ہے اور نہ ہی ان کے ساتھ کوئی تعاون کرنا چاہتا تھا۔

‘غیر قانونی قبضہ‘
عالمی ادارے کے اس خصوصی تفتیشی ماہر نے اپنے خطاب میں کہا کہ مقبوضہ فلسطینی علاقوں میں یہودی بستیوں کا قیام جنگی جرائم کے ارتکاب کے مساوی ہے اور عالمی برادری کو اسرائیل پر یہ بالکل واضح کر دینا چاہیے کہ وہ ‘غیر قانونی قبضے‘ کا مرتکب ہو رہا ہے اور اب ایسا نہیں ہونا چاہیے کہ اسرائیل کو اس کے ان ریاستی اقدامات کی کوئی قیمت ہی نہ چکانا پڑے

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے