اٹلی میں تارکین کی حالت زار پر انسانی حقوق کی تنظیموں کی تشویش

اٹلی میں تارکین کی حالت زار پر انسانی حقوق کی تنظیموں کی تشویش ۔ اٹلی میں کام کرنے والی ایک انسانی حقوق کی تنظیم نے اٹلی میں موجود تارکین وطن کے استحصال کا خدشہ ظاہر کیا ہے۔

تفصیلات

اٹلی میں موجود انسانی حقوق کی تنظیم انٹر ساس نے روم میں کم عمر بے گھر افراد کی بڑی تعداد میں موجودگی پر تشویش کا اظہار کیا ہے۔ تنظیم نے کہا ہے کہ حالیہ دنوں میں اطالوی دارالحکومت میں کم عمر ٹرانزیٹ تارکین کی موجودگی میں نمایاں اضافہ دیکھا گیا ہے۔ جن کے پاس اس رہائش کے لیے بھی کوئی ٹھکانہ موجود نہیں۔

یہ بے گھر کم عمر تارکین جن میں لڑکیاں بھی شامل ہے۔ استحصال کے خطرے سے دوچار ہیں۔یہ ترکی حکومتی ریسیپشن سینٹر کے نظام سے باہر ہیں۔ اور کھلے چھت تلے زندگی گزار رہے ہیں۔ایسے میں ان کا غلط ہاتھوں میں جانے کا خطرہ بڑھ جاتا ہے۔

تنظیم نے کہا ہے کہ وہ اقوام متحدہ کے بچوں کے ادارے یونیسیف کے ساتھ مل کر ان کم عمر تارکین کو تلاش کرنے اور ان کی مدد کرنے کا کام کر رہی ہے۔ان میں کم عمر لڑکیاں بھی شامل ہیں جن میں سے بیشتر کا تعلق ایتھوپیا اور سوڈان سے ہے۔اور یہ جنگ سے بچنے کے لیے وہاں سے فرار ہوئے ہیں۔انہیں پناہ کی تلاش ہے۔تنظیم نے اطالوی حکومت پربھی زور دیا کہ وہ ان تارکین کے لئے ریسیپشن سینٹر کے نظام کو متحرک کریں۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے