ایمازون ایسٹ انڈیا کمپنی کی نئی شکل ہے

ایمازون ایسٹ انڈیا کمپنی کی نئی شکل ہے ۔ہندو قوم پرست تنظیم آر ایس ایس کا ترجمان سمجھے جانے والے ہفت روزہ ‘پانچ جنیہ‘ نے امریکی کمپنی ایمازون کو ‘ایسٹ انڈیا کمپنی 2.0‘ قرار دیتے ہوئے اس پر بھارت کی ثقافت کے خلاف کام کرنے کے الزامات بھی عائد کیے ہیں۔
ہندو قوم پرست جماعتوں اور بھارت کی حکمراں جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی کی مربی تنظیم راشٹریہ سویم سیوک سنگھ(آر ایس ایس) کا ترجمان سمجھے جانے والے ہندی ہفت روزہ’پانچ جنیہ‘ نے اپنے تازہ شمارے میں امریکا کی سب سے بڑی ای۔ کامرس کمپنی ایمازون کو ‘ایسٹ انڈیا کمپنی 2.0‘ قرار دیتے ہوئے اس پر بھارت کی ثقافت کے خلاف کام کرنے نیز اپنے مفاد میں حکومتی پالیسیاں بنانے کے لیے کروڑوں روپے رشو ت دینے کے الزامات عائد کیے ہیں۔

اخبار نے لکھا ہے،”ایسٹ انڈیا کمپنی نے انڈیا پر قبضہ کرنے کے لیے اٹھارہویں صدی میں جو کچھ کیا تھا وہی سب کچھ ایمازون کی سرگرمیوں میں بھی نمایاں طور پر دیکھا جاسکتا ہے۔”

’پانچ جنیہ‘ کے ایڈیٹر ہتیش شنکر نے نئے شمارے کا سرورق ٹوئٹ کیا ہے، جس پر ایمازون کے سربراہ جیف بیزوس کی تصویر ہے۔ یہ شمارہ 3 اکتوبر کو بازار میں آئے گا۔

خیال رہے کہ بھارت کی حکمراں جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی کے بارے میں یہ عام تاثر ہے کہ آر ایس ایس کے اشارے کے بغیر وہ ایک قدم بھی آگے نہیں بڑھا سکتی ہے۔ وزیر اعظم نریندر مودی سے لے کر اترپردیش کے وزیر اعلی یوگی ادیتیہ ناتھ اور دیگر وزرائے اعلی نیز گورنروں کی اور تمام اہم آئینی و دیگر عہدوں پر تقرری اور حکومت کی تمام اہم پالیسیاں آر ایس ایس کی منظوری کے بعد ہی روبہ عمل آتی ہیں۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے