پیسے دو، یورپی پاسپورٹ لو، دو یورپی ممالک کی سکیم

پیسے دو، یورپی پاسپورٹ لو، دو یورپی ممالک کی سکیم کو خطرہ لاحق ہو گیا۔دو یورپی ممالک کی پیسے شو کرکے پاسپورٹ دینےکی اسکیم کا مستقبل خطرے میں پڑ گیا ہے۔ یورپی کمیشن نے بڑے سرمایہ داروں کو شہریت دینے والے دونوں ممالک کو گولڈن پاسپورٹ کی سکیم ختم کرنے کا عندیہ دے دیا ہے۔ان ممالک سے دو ماہ کے اندر جواب مانگا گیا ہے اس کے بعد کاروائی کرنے کا کہا گیا ہے۔

تفصیلات

تفصیلات کے مطابق یورپی یونین میں شامل دو چھوٹے ممالک مالٹا اور سائپرس (قبرص) نے بڑے سرمایہ داروں کو اپنی طرف راغب کرنے کے لیے گولڈن پاسپورٹ کی سکیم شروع کر رکھی تھی۔ جس کے مطابق ایک مخصوص رقم ان ممالک میں سرمایہ کاری کے لیے لانے پر شہریت دے دی جاتی تھی ۔

کیونکہ یہ ممالک یورپی یونین کا حصہ ہیں اس لئے ان کا شہری بننے کے بعد مذکورہ شخص یورپی شہری بن جاتا ہے۔یورپی یونین اس حوالے سے تحفظات کا اظہار کرتی رہی ہے۔اور ان ممالک سے مطالبہ کرتی رہی ہے کہ وہ گولڈن پاسپورٹس سکیمیں ختم کر دے۔ لیکن سائپرس اور مالٹا نے اس حوالے سے کوئی کارروائی نہیں کی اور یہ سکیمیں جاری رکھیں۔

یورپی یونین نے چند ماہ قبل اکتوبر 2020 میں ان ممالک کو باضابطہ نوٹس جاری کیا تھا اور جواب مانگا تھا۔اب یورپی کمیشن نے مالٹا اورقبرص کے جواب کو غیر تسلی بخش قرار دیتے ہوئے دوسرا نوٹس بھیجنے کا فیصلہ کیا ہے۔ بالخصوص مالٹا سے پچھلے سال متعارف کروائی گئی کیش فار پاسپورٹ اسکیم پر جواب مانگا گیا ہے۔یورپی کمیشن نے دونوں ممالک پر گولڈن پاسپورٹ اسکیم ختم کر نے کے لئےزور دیا ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے